ملک کاتاریخی بجٹ۔۔؟

Print Friendly, PDF & Email

تحریر: عمرخان جوزوی
انصاف والوں کی حکمرانی مےں دس گےارہ مہےنوں کے اندرملک وقوم کاجوحشرہواوہ بےان سے بھی باہرہے۔ملک مےں مہنگائی ،غربت اوربےروزگاری کی شرح اس نہج تک پہنچ چکی ہے جہاں غرےب توغرےب اب کوئی امےربھی نہ جی سکتاہے اورنہ مرسکتاہے۔پرانے پاکستان سے نئے پاکستان مےں منتقل ہونے والاہرشخص آج اےڑھےاں رگڑنے اوربھوک وافلاس سے بلک بلک کررلنے اورتڑپنے پرمجبورہے۔ڈی چوک مےں کنٹےنرپرکھڑے ہوکرجولوگ غرےبوں وبےروزگاروں کوروزگاردےنے کے وعدے اوربلندوبانگ دعوے کررہے تھے انہی لوگوں نے اقتدارمےں آنے کے بعدہزاروں لوگوں کوچندماہ مےںروزگارسے ہی محروم کردےاہے۔محض چندمہےنوں مےں ملک کے اندربے شمارفےکٹرےاں وکارخانے بنداورکئی بڑے بڑے کاروباری ادارے تباہ ہوچکے ہےں ۔کسی غرےب اوربےروزگارکونےاروزگارملناتودورپی ٹی آئی حکومت کی برکت سے اب تک ہزاروں غرےب لگی نوکرےوں سے بھی ہاتھ دھوبےٹھے ہےں ۔کل تک جولوگ ڈالرکی قےمت بڑھنے پرن لےگ کی حکومت اورسابق وزےرخزانہ اسحاق ڈارکوطرح طرح کے طعنے دےتے تھے آج ان لوگوں کوڈالرکی قےمت مےں مسلسل اضافے پرذرہ بھی شرم محسوس نہےں ہورہی۔ماضی مےں جوبڑے بڑے اےماندارآئی اےم اےف پراےک سانس مےں ہزاربارلعنت بھےجتے تھے آج وہ اےماندارآئی اےم اےف کی لونڈی بننے اورگوروں کے تلوے چاٹنے پرفخرمحسوس کررہے ہےں ۔اقتدارمےں آنے سے پہلے جولوگ عوام عوام اورانصاف انصاف کی رٹ لگاکراپنے دبلے پتلے گلے پھاڑرہے تھے ان لوگوں نے اپنے پہلے ہی سالانہ بجٹ کے اندرعوامی امےدوں ،خواہشات اورامنگوں کاخون کرکے انصاف کاجنازہ نکال دےاہے۔70سال سے چور،ڈاکواورلٹےرے جوبجٹ پےش کررہے تھے ان مےں بھی اتناظلم وکفرکبھی نہےں ہواجوظلم وکفراس بجٹ مےں کےاگےاہے۔جو لوگ پہلے سے ہی ماچس کی ڈبی،پےناڈول کی گولی اورموبائل کارڈپربھی حدسے زےادہ ٹےکس دےتے ہےں ان کے لئے اس بجٹ مےں ٹےکس کے علاوہ کوئی بات ہی نہےں ۔انصاف والوں کی انصاف کاعالم تودےکھےں ۔ان کاپہلاتارےخی بجٹ ہی ٹےکس سے شروع کرٹےکس پرختم ہوتاہے۔اس ملک مےں اےسی کوئی چےزبتائےں جس پرغرےب عوام ٹےکس نہ دےتے ہوں ۔غرےبوں کی تواٹھتے اورسوتے ہی پہلی ملاقات ٹےکس سے ہوتی ہے۔آٹے پرٹےکس،چےنی پرٹےکس،دال پرٹےکس،صابن پرٹےکس،سرف پرٹےکس،سی اےن جی وپٹرول پرٹےکس،جوتے پرٹےکس،کپڑوںپرٹےکس،پانی پرٹےکس،گھرپرٹےکس،دکان پرٹےکس،اےزی لوڈپرٹےکس،موبائل کارڈپرٹےکس،کال پرٹےکس،بجلی پرٹےکس،گےس پرٹےکس،ادوےات پرٹےکس،سبزی پرٹےکس،فروٹ پرٹےکس،مرغ پرٹےکس،گوشت پرٹےکس،زمےن پرٹےکس،موےشےوںپرٹےکس،کاعذپرٹےکس ،قلم پرٹےکس،کتابوں پرٹےکس،شادی پرٹےکس،غمی پربھی ٹےکس۔اس ملک مےں غرےب توپہلے ہی سرسے پاﺅں تک ٹےکس مےں ڈوبے ہوئے ہےں ۔غرےبوں کاتونہ جےناٹےکس سے خالی ہے اورنہ ہی مرناٹےکس سے باہر۔کھانے پےنے سے لےکررہن سہن اورزندگی گزارنے کے ہرنظام تک کوئی شئے اےسی نہےں جس پرغرےب عوام ٹےکس نہ دےتے ہوں ۔ےاان سے ٹےکس نہ لےاجاتاہو۔اس کے باوجودپی ٹی آئی حکومت کابجٹ مےںغرےبوں کوکچھ دےنے کی بجائے پورے بجٹ کوٹےکس تک محدودکرناسمجھ سے بالاترہے۔چاہےئے توےہ تھاکہ انصاف والے کم ازکم لفظ انصاف کاکچھ خےال ولحاظ کرکے بجٹ مےں غرےب عوام پرکچھ رحم کرتے ۔مگرافسوس آئی اےم اےف کے ٹکروں پرپلنے والوں کوانصاف اورعوام سے کےاسروکار۔۔؟اس لئے بجٹ مےں آٹا،چےنی ،دال ،گھی،دودھ،چاول ،گوشت ،سبزی وفروٹ سمےت دےگراشےائے ضرورےہ کی قےمتوں مےں کمی کرنے کی بجائے ٹےکسوں پرمزےدٹےکس لگائے گئے تاکہ اس ملک مےں غرےب عوام جی ہی نہ سکےں۔وزےراعظم عمران خان نے اقتدارمےں آکرغرےب عوام کوواقعی رلادےادےاہے۔70سالوں سے ملک کودےمک کی طرح کاٹنے اورچاٹنے والے توآج بھی انصاف کی کشتی اوررےسٹ ہاﺅس نماجےلوں مےں اے اوربی کلاس لےکرعےش وعشرت اورآرام وسکون کی زندگی گزاررہے ہےں لےکن سترسالوں سے اپناخون وپسےنہ بہاکرٹےکسوں پرٹےکس دےنے والے غرےب عوام پرعرصہ حےات تنگ کردےاگےاہے۔ماضی مےں جن سےاسی اژدھوں کے بڑے بڑے پےٹ پھاڑکران سے لوٹی ہوئی قومی دولت واپس لےنے کے دعوے اوروعدے کئے جارہے تھے آج ان اژدھوں کواپنے ساتھ ملاکراےک بارپھرغرےب عوام کے ٹےکسزسے ان کے جہنم بھرے جارہے ہےں ۔دس گےارہ مہےنوں کے اندرمہنگائی مےں توسوفےصداضافہ ہوا۔گےس ،بجلی اورادوےات سمےت کئی اشےاءکی قےمتےں توڈےڑھ سوفےصدتک بڑھےں لےکن اس کے باوجودبجٹ کے اندرملازمت پےشہ طبقے کے ساتھ جوسلوک کےاگےاوہ بھی انصاف انصاف کی رٹ لگانے والوں کے منہ پرکسی طمانچے سے کم نہےں ۔ جن کی اپنی حکومت مےں مہنگائی سوفےصدبڑھی ۔ان کی حکومت مےں غرےب سرکاری ملازمےن کی تنخواہوں مےں محض دس فےصداضافہ کھوداپہاڑنکلاچوہانہےں تواورکےاہے۔۔؟آٹا،چےنی اورگھی کے قےمتےں بڑھانے کی مدمےں ہی اےک غرےب کی جےب سے ہزارسے دوہزارروپے اضافی نکالنے والوں کی جانب سے اےک غرےب ملازم کی تنخواہ مےں ہزارسے بارہ سوروپے اضافہ ےہ انصاف انصاف کی راگ الاپنے والوں کے لئے چھلوبھرپانی مےں ڈوب مرنے کامقام ہے۔چوروں،ڈاکوﺅں اورلٹےروں کی حکمرانی مےں بھی اتناظلم کبھی نہےں ہواجوظلم آج اےمانداروں اورانصاف کے نام نہادعلمبرداروں کی حکمرانی مےں ہورہاہے۔اےساغرےب کش بجٹ توکسی چوراورڈاکوحکمران نے بھی کبھی پےش نہےں کےاہوگاجوان اےمانداروں نے پےش کےاہے۔نئی کااستراجب سے بندرکے ہاتھ لگاہے امےرغرےب سب کی جےبےں کٹنے لگی ہےں۔پچھلے دس گےارہ مہےنوں مےں کبھی ےہ نہےں کہاگےاکہ فلاں چےزکی قےمت کم ہوئی ہے بلکہ بجلی ،گےس،ادوےات،آٹا،دال ،چےنی،سی اےن جی ،پٹرول اورڈالرسمےت ہرچےزکے بارے مےں ہرروزےہ سننے کومل رہاہے کہ فلاں چےزکی قےمت آج اتنی بڑھی فلاں کی اتنی بڑھی۔سی اےن جی اورپٹرول کی قےمت مےں تےن سے چارروپے اضافہ کرکے پھر77پےسے کمی کرناےہ اےمانداروں کاکام نہےں بلکہ چورحکمرانوں کی نشانی ہے۔ ےہ توکپتان نے خود فرماےاتھاکہ جب ڈالر،پٹرول ،گےس وبجلی کی قےمتےں اورمہنگائی بڑھےں توسمجھ لےناکہ وزےراعظم چورہے۔ہم تونہےں کہتے کہ آج ملک کاوزےراعظم چورہے لےکن ملک مےں بڑھتی مہنگائی،ڈالرکابے قابوہونا،معےشت کاہچکولے کھانا،غرےب عوام پرعرصہ حےات اورزمےن تنگ ہونااورملک مےں ماےوسی،پرےشانی اورحکمرانوں سے بےزاری کی بلندہوتی لہرےں چےخ چےخ کراس بات کاپتہ اوراشارہ دے رہی ہےں کہ سابق چوراورڈاکوحکمرانوں کی طرح ملک کے موجودہ حکمران بھی ٹھےک نہےں۔وزےراعظم عمران خان نے ٹھےک فرماےاتھاملک کاوزےراعظم چورنہ ہوتو ملک مےں نہ مہنگائی بڑھتی ہے،نہ ڈالربے قابوہوتاہے،نہ معےشت ہچکولے کھاتی ہے،نہ غرےب عوام پرعرصہ حےات ہوتاہے اورنہ ہی ملک مےں ماےوسی،پرےشانی اورحکمرانوں سے بےزاری کی لہرےں بلندہوتی ہےں۔ملک آج کی طرح مہنگائی ،غربت،بےروزگاری ،معاشی بدحالی اورتباہ حالی کاتب شکارہوتاہے جب حکمران چورہوں۔ہم نے تووزےراعظم عمران خان کوکبھی چورنہےں کہالےکن ملک کے جوحالات چل رہے ہےں ۔مہنگائی جس طرح عام اورخاص کواپنی لپےٹ مےں لے رہی ہے ۔غرےبوں پرجس طرح عرصہ حےات تنگ کےاجارہاہے۔سی اےن جی،پٹرول،بجلی وگےس سمےت دےگراشےائے ضرورےہ کی قےمتوں مےں جس رفتارسے مسلسل اضافہ ہورہاہے ۔ان حالات مےں ہم وزےراعظم عمران خان کواےمانداربھی نہےں کہہ سکتے۔ وزےراعظم عمران خان واقعی چورنہےں ہوں گے لےکن ان کی سربراہی،حکمرانی اورکپتانی مےں جوکام ہورہے ہےں وہ کسی اےماندارکی حکمرانی اورکپتانی مےں ہرگزنہےںہوسکتے۔عمران خان کی حکمرانی مےں ملک کے 22کروڑعوام کوجس طرح خاک کھانے پرمجبورکےاجارہاہے اسے دےکھ کرہم وزےراعظم عمران خان کواےماندارکےسے مانےں ےا کہےں۔۔؟ البتہ پی ٹی آئی حکومت کے بجٹ کوہم ،،تارےخی بجٹ،،ضرورکہہ اورمان سکتے ہےں کےونکہ ٹےکس سے ٹےکس تک اس طرح کابجٹ اس سے پہلے اس ملک مےں کبھی پےش نہےں ہوا۔

90 total views, 3 views today

Short URL: //tinyurl.com/y4x8u2tg
QR Code:
انٹرنیٹ پہ سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضامین
loading...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *