غزل: عید آئی تم نہ آئے انتظار ہم کرتے رہے

Print Friendly, PDF & Email

عید آٸی تم نہ آٸے انتظار ھم کرتے رھے
کبھی اڈھر کبھی اُڈھر آھیں ھم بھرتے رھے
کیا کیا سوچا تھا تم سے پیار بھری باتيں کریں گے
تمہاری تلاش میں سارا دن ھم پھرتے رھے
عید آٸی تم نہ آٸے انتظار ھم کرتے رھے
ایسا واعدہ ھی کیوں کیا تھا جو پورا نھیں کیا
عید گذر گٸی اور پل پل ھم مرتے رھے
عید آٸی تم نہ آٸے انتظار ھم کرتے رھے
سب لوگوں نے میرا مذاق بنایا قسم خدا کی
عید والے دن بھی تمہاری خاطر لوگوں سے ھم لڑتے رھے
عید آٸی تم نہ آٸے انتظار ھم کرتے رھے
تمہارے سوا بھی کیا عید تھی سوچو ذرا تم
عید پے تم آٶ گے یا نھیں ھر پل سوچ کر ھم ڈرتے رھے
عید آٸی تم نہ آٸے انتظار ھم کرتے رھے
لیاقت کو تم نے عید والے دن نہ آکے دکھ دیا ھے
دل ھی دل میں تپتے اور ھم سڑتے رھے
عید آٸی تم نہ آٸے انتظار ھم کرتے رھے
شاعر: لیاقت علی شیخ، خیرپور میرس، سندہ

387 total views, 3 views today

Short URL: //tinyurl.com/yyrbaems
QR Code:
انٹرنیٹ پہ سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضامین
loading...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *