کانگو وائرس کے پھیلاؤ کوروکنے کے لیے حکومت پنجاب کے اقدمات

Print Friendly, PDF & Email

داؤدخیل (نامہ نگار)کانگو وائرس کے پھیلاؤ کوروکنے کے لیے حکومت پنجاب کے اقدمات ۔ مویشی منڈیوں میں محکمہ پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کیئر کی جانب سے محکمہ لائیو سٹاک کے ڈاکٹروں نے جانوروں کو کانگو وائرس (چچڑوں ) سے بچاؤ کے لیے سپرے کا آغاز کر دیا تاکہ جانوروں کو چچڑوں سے پاک کر کانگو وائرس کا خاتمہ کیا جا سکے۔ داؤدخیل لائیو سٹاک کے عملہ نے مویشی منڈی داؤدخیل میں جانوروں پر سپرے کیا ۔اس موقع پرویٹرنری ڈاکٹرعبد الحمید نے منڈی میں موجود لوگوں کو کانگو وائرس سے بچاؤ کے لیے احتیاطی تدابیر بتاتے ہوئے کہا کہ کانگو ایک خطرناک وائرس ہے جو جانوروں میں پلنے والے چچڑ کے کاٹنے سے پھیلتا ہے ۔یہ متاثرہ جانور یا فرد کے خون یا رطوبتوں سے پھیل سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ منڈی آتے وقت چچڑ سے محفوظ رہنے کے لیے احتیاطی تدابیر اپنائیں یا چیچڑ بھگاؤ لوشن لگائیں۔ قصاب جانوروں کو ذبح کرتے وقت احتیاط کریں۔ جانوروں کے خون سے آلودہ ہونے سے بچیں۔ ان کے خون اور آلائشوں کو تلف کریں اورزمین میں دبا دیں ۔مواشی کے باڑوں میں صفائی کا خاص خیال رکھیں۔ بچوں کو جانوروں کے ساتھ کھیلنے سے روکیں۔ محکمہ لائیو سٹاک کے مشوروں سے چچڑ مار ادویہ استعمال کریں اور کانگو سے متاثرہ مریضوں اور جانوروں پر سپرے کرتے وقت ماسک اور دستانوں کا استعمال کریں۔ ڈاکٹر عبدالحمید نے کہاکہ شدید درد،منہ اور ناک سے خون آنا،متلی اور قے،تیز بخار،جسم پر سرخ رنگ کے نشان اور دھبے کانگو بخار کی علامات ہیں ۔نیوٹریشن سپروائزر مجتبیٰ خان نے بھی گزشتہ گورنمنٹ گرلز ایلیمنٹری سکول کینال کالونی داؤدخیل میں اساتذہ اور طلبہ کو کانگووائرس سے متعلق تفصیلات سے آگاہ کیا۔

Short URL: http://tinyurl.com/jn4cx6b
QR Code:


Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *