٭ شیخ خالد زاہد ٭

سیلاب، سیاست اور مہنگائی!

Sheikh Khalid Zahid

بہت عرصہ اس خوف میں بیت گیا کہ قلم کو روندھے جانے کی جو رسم چل رہی ہے اس میں ہمارا قلم بھی کہیں ٹوٹ پھوٹ کا شکار نا ہو جائے، گوکہ ہم نے ہمیشہ اس بات کو خاطر میں

آزادی کی حنوط شدہ لاش!۔۔۔۔ تحریر: شیخ خالد زاہد

Sheikh Khalid Zahid

ہم اللہ رب العزت کا جتنا شکر ادا کریں وہ کم ہوگا کہ اس نے ہ میں رہنے کیلئے دنیا جہان کی نعمتوں سے لبریز ایک خطہ زمین ہمارے آباءو اجداد کی قربانیوں کی بدولت عطاء فرمایا ۔ اس خطہ

اور کراچی بہتا رہا!۔۔۔ تحریر: شیخ خالد زاہد

Sheikh Khalid Zahid

دنیا جہان کی طرح پاکستان میں بھی مکانات اور رہنے کیلئے بنائے گئی رہائشگاہیں موسموں کی مناسبت سے بنائی جاتی ہیں ۔ وہ علاقے جہاں بارشیں یا برفباری ہوتی ہے وہاں مخصوص چھتوں والے مکان بنائے جاتے ہیں تاکہ پانی

میرا گھر میرا پاکستان اسکیم!۔۔۔۔ تحریر: شیخ خالد زاہد

Sheikh Khalid Zahid

ایک اندازے کے مطابق پاکستان میں بے گھر افراد کی تعداد دو (۲) کروڑ بتائی جاتی ہے جبکہ پاکستان کی اکثریت آبادی مشترکہ خاندانی نظام کے تحت زندگیاں گزار رہی ہیں ۔ جہاں ایک گھر میں تین یا اس سے بھی

ہم کمزور نہیں ہیں!تحریر؛ شیخ خالد زاہد

Sheikh Khalid Zahid

کرونا نے سب سے زیادہ متاثران لوگوں کو کیا جو کمزور تھے ، یہ کمزوری عصابی اور جسمانی دونوں طرح کی تھی ۔ یہاں یہ مقولہ بھی صادق ہوتا دیکھا گیا کے جو ڈر گیا وہ مرگیا اور باقاعدہ مر

من کا بھوت بنگلہ!۔۔۔ تحریر: شیخ خالد زاہد

Sheikh Khalid Zahid

ہم اپنے اندر ایک بھوت بنگلا لئے گھوم رہے ہیں یا سب انسانوں کے اندر یہ بھوت بنگلہ ہوتا ہے ، شائد یہ بھوت بنگلہ وقت حالات اور واقعات مل کر بناتے ہیں جس میں تزئین و آرائش اور مکینوں

جب سرپرست، سرپرستی چھوڑ دیں (سیاسی)!۔۔۔۔ تحریر: شیخ خالد زاہد

Sheikh Khalid Zahid

ملک انتہائی تکلیف دے حالات سے دوچار ہے اور ان تکلیف دے حالات کا سبب ملک کو خودمختار ہونے سے روکنے کی وجہ سے ہوا ہے ۔ رواءتی حالات کے عادی اور صحیح غلط سے عاری طرزِ حکمرانی کے نظام

کیا ایسا بھی ہوسکتا ہے؟۔۔۔۔ تحریر: شیخ خالد زاہد

Sheikh Khalid Zahid

وقت کسی بپھرے ہوئے سمندر کا رویہ اختیار کر چکا ہے جس کی وجہ سے ساری دنیا کے حالات غیر یقینی کی صورتحال سے دوچار ہیں ۔ جیسا سوچا تھا ویسا تو ہوا نہیں اور ویسا ہوگیا جس کا خیال

ابھی ذوق پرواز باقی ہے!۔۔۔۔ تحریر: شیخ خالد زاہد

Sheikh Khalid Zahid

بظاہر تو ایسا لگتا ہے کہ ہماری زندگیاں کسی کوہلو کے بیل کی طرح گزرتی جارہی ہیں یعنی گردشِ ایام ایک مخصوص گرداب کی زد میں ہے ۔ بقول شاعر کے ْرخ ہواءوں کا جدھر ہے ادھر کے ہم ہیں

ریوڑ سے قوم بننے کا سفر!۔۔۔۔ تحریر: شیخ خالد زاہد

Sheikh Khalid Zahid

پاکستان کی تخلیق کا بنیادی نقطہ کلمہ لا الہ الا اللہ محمدرسول اللہ تھا جس پر برِ صغیر کے مسلمانوں کی اکثریت نے لبیک کہا اور تحریک پاکستان کا وجود عمل میں آگیا ۔ یہ کلمہ حق جو مسلمانوں کی