استاد ایک انمول ہستی

Benash Ahmad
Print Friendly, PDF & Email

تحریر: بینش احمد، اٹک، پاکستان

کوئی بھی انسان د±نیامیں تنہا نہیں رہ سکتا ہے ہمیں کسی نہ کسی رشتے کی ضرورت ہوتی ہے، کچھ رشے خونی ہوتے ہیں جن میں ہمارے گھر والے ہمارے عزیز واقارب شامل ہیں جبکہ کچھ رشتے ایسے ہوتے ہیں جن سے ہمارا تعلق خونی تو نہیں ہوتا لیکن وہ اپنوں سے بڑھ کر ہوتے ہیں۔ انہی میں سے ایک رشتہ ا±ستاد کا ہے۔
اساتذہ ہمارے روحانی والدین بھی کہلاتے ہیں – اسلام میں ا±ستاد کا رشتہ والدین کے رشتے کے برابر قرار دیا گیا ہے کیونکہ ا±ستاد ہی ایسی واحد شخصیت ہے جو والدین کے بعد بچوں کی تربیت میں اہم کردار ادا کرتا ہیں – ا±ستاد ہی ہے جو ہمیں معاشرے میں رہنے کے طور طریقے سکھاتا ہے اور ہمیں کتابوں کا علم پڑھاتا ہے-حضرت علی رضی اللہ± تعالیٰ عنہا نے فرمایا:
’’اگر تم بادشاہ ہو تو بھی اپنے ا±ستاد اور والد کی تعظیم میں کھڑے ہو جا¶’‘
اس بات سے ا±ستاد کی حیثیت کا بخوبی اندازہ لگایا جا سکتا ہے- ایک ا±ستاد ہی ہے جو پتھر کو تراش کر ہیرا بناتا ہے- ا±ستاد کا کام صرف طلباءکو کتابی سبق ہی پڑھانا نہیں بلکہ وہ طلباءکو زمانے کی تمام ا±ونچ نیچ کے بارے میں سکھاتا ہے اور معاشرے میں رہنے کے طور طریقوں سے بھی آگاہی فراہم کرتا ہے-ا±ستاد کے احترام اور اس کی مناسب تربیت کے بغیر کوئی بھی انسان کامیابی حاصل نہیں کر سکتا-
مشہور محاورہ ہے کہ: ‘با ادب با نصیب’، ‘بے ادب بے نصیب’
جو انسان اپنے اساتذہ کا ادب و احترام نہیں کرتا وہ منہ کے بَل گرتا ہے-آپ پوری د±نیا میں نظر دوڑا کر دیکھ لیں کوئی بھی ایسا رشتہ نہیں ہوگا جو بغیر مطلب کے آپ کے ساتھ ہو- آج کل کے رشتے صرف اور صرف مطلب کی بنیاد پہ قائم ہیں مطلب ختم تو رشتہ بھی ختم-لیکن ہمارے والدین اور اساتذہ ایسی واحد شخصیات ہیں جو بنا مطلب کے ہمارا ساتھ دیتے ہیں اور چاہتے ہیں کہ ا±ن کے بچے ا±ن سے بھی ذیادہ آگے جائیں اور مزید ترقی کریں -ہمارے پیارے نبی حضرت محمد کو تمام انسانوں کیلئے معلم بنا کر بھیجا گیا ہے- جب آپ صحابہ کرام رضی اللہ عنہا سے خطاب کیا کرتے تھے تو صحابہ کرام اسقدر خاموشی سے بیٹھتے تھے کہ اپنے سروں کو حرکت تک نہیں دیتے تھے بیشک ا±ن کے سروں پہ پرندے آ کر کیوں نہ بیٹھے رہیں اور ایک موجودہ دور کے طلباءہیں کہ ا±نہوں نے ا±ستاد کے ادب و احترام کو بالکل ایک طرف کر کے رکھ دیا ہے- طلباءاپنے ا±ستاد کے سامنے تن کر کھڑے ہو جاتے ہیں ا±ن سے اونچی آواز میں بحث و مباحثہ کرتے ہیں -اکثر دکھائی دیتا ہے کہ وہ ان کے ساتھ جھگڑا بھی کرتے ہیں جو کہ بے حد نا مناسب طرز عمل ہے۔
میرے لیے میرے تمام ا±ساتذہ قابلِ عزت ہیں – میں نے جب سے اس شعبے میں قدم رکھا ہے تو ہر قسم کے لوگوں سے میرا واسطہ پڑا ہے- لیکن دو ایسی شخصیات ہیں جو میرے لئے بہت ہی ذیادہ قابلِ احترام ہیں۔ آپ کود±نیا میں ایسے بہت کم لوگ ملیں گے جو بغیر کسی صلہ اور مطلب کے آپ کی مدد کریں گے- یہ میرے ایسے ا±ستاد ہیں جن سے مجھے وہ سب کچھ سیکھنے کا موقع مل رہا ہے جو شاید میں نے اپنی بائیس سالہ زندگی میں بھی نہیں سیکھا ہے۔ میں ان کے نام ظاہر نہیں کروں گی لیکن اللہ تعالیٰ سے ہر پل میری یہی د±عا رہتی ہے کہ میرے اللہ تعالیٰ ان اساتذہ کو مزید ترقی عطا فرمائیں، ا±ن کو لمبی زندگی دیں اور اسی طرح وہ دوسروں کو روشنی کی طرف لاتے رہیں۔آمین ثم آمین

Short URL: https://tinyurl.com/2f2vzypz
QR Code:


Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *