٭ منشاء فریدی ٭

نوید صبح

Mansha Fareedi

تحریر :منشاء فریدی ساجد !شہر ڈو ونج ،مگر شرط ہے ایہا سینہ جے میڈی جان! زمانے دا صاف ہے ہمارے وسیب ،ہماری دھرتی اور ہمارے خطے کے عا لمگیرشاعر فرید ساجد کا یہ شعر عکاس ہے ان جذبات کا، عکاس

دلائل و براہین کو ’’ بحث و نظر ‘‘ کا حصہ بنائیے!۔

Mansha Fareedi

تحریر: منشاء فریدی کسی بھی معاصرروزنامہ کے لیے ضروری ہے کہ وہ علاقائی ، قومی اور بین الاقوامی سطح پر جاری ابحث کوغیر جانبدارانہ انداز میں شائع کرے کیونکہ یہی حسن صحافت ہے ورنہ کوئی بھی جریدہ اپنا وقار کھو

قومی اسمبلی کا اجلاس اور ہماری وزارت داخلہ

Mansha Fareedi

تحریر: منشاء فریدی کاش وطن عزیز پاکستان میں امن قائم ہو۔ امیدِ واثق ہے کہ یہ خواہش ایکدن ضرور پوری ہو گی لیکن اس دعاء کو قبولیت تک پہنچنے میں ہمارے ارباب سیاست سب سے بڑی رکاوٹ ہیں ۔ اور

سیاست اور مملکت چلانے کیلئے منافقت نہیں چلے گی

Mansha Fareedi

تحریر : منشا فریدی دارورسن کا دور عام ہے۔ سچ کو سُولی پہ لٹکایا جا رہا ہے۔ہر سُو دہشت کی فضا ہے۔ اور دہشت گردی کی تعریف بھی خود ساختہ ہے۔ جس کے تحت شعور مصلوب ہو رہا ہے۔ یہ

سرائیکستان اور نان سرائیکستان‘‘ نقطۂ نظر واضح کریں

Mansha Fareedi

تحریر :منشاء فریدی میرے نزدیک قوم کی بنیاد ثقافت ہے ۔ نا کہ مذہب ، نسل ، ریاست ، ملک اور پیشے ۔۔۔۔! جو لوگ یا دانشور یا قبائلی نظام کے پر چار ک جب قومیت کی بنیاد درج بالا

اشتہار ’’تلاش گمشدہ ‘‘ اور اغواء کا مقدمہ

Mansha Fareedi

تحریر: منشا ء فریدی ہمیں جس قدر ہمارے ہی سلامتی کے اداروں نے متاثر کیا ہے ۔ شاید ہی کسی اور ادارے میں اس طرح ہم جسمانی سطح پر ذلت کا شکار ہوئے ہو ں ۔ پورے ملک میں جس

ظفر لنڈ کی ٹارگٹ کلنگ اور سرائیکی قوم پرستوں سے شکایت۔۔۔۔ تحریر : منشاء فریدی

Mansha Fareedi

کامریڈ اور سرائیکی دھرتی کے عظیم فرزند ظفر لنڈ کو ہدف بناکر شہید کر دیا گیا ۔ یہ سانحہ دھرتی کیلئے نا قابل تلافی نقصان ہے ۔ نہ جانے کیوں ۔۔۔؟ بزدلوں کو قلم و شعور سے وابستہ افراد اور

خواجہ غلام فرید کوریجہ اور سرائیکستان کیلئے جدو جہد ۔۔۔۔ تحریر : منشاء فریدی

Mansha Fareedi

تاریخ ہمیشہ ان ہستیوں کو زندہ رکھتی ہے جو اپنی جد جہد کے ذریعے ایسا فلسفہ عام کرتے ہیں جو دوسروں کی زندگی اور روّیوں میں تبدیلی کا باعث بنتے ہیں ۔ یہی جدو جہد ارضی حقائق بدلنے میں بھی

سرائیکی قومیتی جدو جہد میں گھس بیٹھے ’’ایرے غیرے ‘‘۔۔۔۔ تحریر: منشاء فریدی

Mansha Fareedi

ہر ملک اور ریاست میں مرکز پرست رویّے اپنی بالا دستی چاہتے ہیں ۔ تسلط کی مضبوطی ہی ان کی جمع پونجی میں اضافے کا باعث ہے ۔ خطے کی سلامتی اور ریاست کی طاقت کیلئے یہ ایک ضروری امر

ایک آبدیدہ حقیقت ۔۔۔۔تحریر : منشاء فریدی

Mansha Fareedi

میں اس آبدیدہ حقیقت اور خونچکاں داستان کی ابتداء شفقت کاظمی کے اس شعر سے کرتا ہوں کہ !۔ اہل دنیاکو ہے کیا درد ماروں سے غرض کون سنتا ہے بھلا مجھ سے فسانہ میرا میں اپنی کم علمی و