یومِ یکجہتئ کشمیر کے تقاضے

Print Friendly, PDF & Email

تحریر:ڈاکٹر میاں احسان باری


بلاشبہ5فروری کو یوم یکجہتی کشمیر پاکستان ہی میں نہیں بلکہ عالم اسلام کے بیشتر ممالک میں انتہائی اہتمام سے منایا جاتا ہے اس روز جلسے جلوس سیمینارزکا انعقاد ہوتا ہے میلوں لمبی انسانی زنجیر بنائی جاتی ہے بھارتی بر بریت ،سفاکانہ مظالم اور کشمیریوں کے بہیمانہ قتل و غارت گری کے خلاف قرا ر دادیں منظور کی جاتی ہیں ۔پاکستانیوں کا بالخصوص امسال قومی مطالبہ ہے کہ منتخب ممبران اسمبلی و سینٹ کے مشترکہ اجلاس میں پانچ فروری سے قبل ہی قائداعظمؒ کے فرمان” کشمیر پاکستان کی شہ رگ ” کوقومی مؤقف قراردیا جائے نوجوان مظفر وانی کی شہادت کے بعد چلنے والی تحریک آزادی کے شہداء کو کم ازکم فی کس دس لا کھ روپے ادا کرنے کے اعلان کے ساتھ تمام زخمی مجاھدین کے علا ج معالجہ کے لیے خصوصی اہتمام اور فنڈز مخصوص کیا جائے ۔بیشتر دینی تنظیمیں اور مذہبی و دیگر سیاسی جماعتیں 2017 کے سال کو کشمیر کے نام کرنے کا فیصلہ کر چکی ہیں اب اگر اس کا اہتمام سرکاری طور پر بھی کر لیا جائے اور کشمیر کمیٹی کے افراد فوراً اقوام متحدہ اس کی سلامتی کونسل و دیگر اداروں تک کشمیریوں پر مظالم کی رو ح فرسا داستانیں پہنچائیں تو کشمیریوں کی جدو جہد کو زبردست مہمیز ملے گی اور پاکستان کی آزادی کے دن چودہ اگست کوہی انشا ء اللہ کشمیریوں کی جدو جہد کامیاب ہوجائے گی اور پاکستانیوں کی سیاسی ،اخلاقی اور سفارتی سطح پر امداد سے کشمیرہندو ؤں کے چنگل سے آزادہو جائے گا جیسے کشمیریوں اور پاکستانیوں کے دل ایک ساتھ دھڑکتے ہیں اسی طرح کشمیری بھی چودہ اگست 2017کا آزادی کا دن پورے تزک و احتشام سے منایا کریں گے (انشاء اللہ) دراصل ہماری قیادت ہندوستان کے ساتھ برابری کی بنیاد پر تعلقات استوار کرنے کے لیے کوشاں تو رہی ہے مگر مودی سرکار کے آتے ہی’الٹی ہوگئیں سب تدبیریں کچھ نہ دوا نے کام کیا’ کی طرح پاکستانی وزارت خارجہ کی تمام کو ششیں رائیگاں ہو کر رہ گئیں ہمارے محترم وزیر اعظم کی بغیر مشاورت بھارت جا کر مودی کی تقریب حلف برداری میں شمولیت اور پھر مودی کا نواز شریف کے گھریلوفنکشن میں آدھمکنا بھی کسی کام نہ آسکا۔بھارت میں چار ماہ سے زائد کرفیو لگا کر سیفٹی ایکٹ کے تحت مظلومین کا قتل و غارت گری کر کے پاکستان کی طرف بہنے والے دریاؤں کے پانی میں شہیدوں کا خون بہایا ہے ۔اس بناپر خدا کی تائیدو نصرت سے امید قوی ہے کہ کشمیر ضرور آزاد ہو کر پاکستان سے آملے گا کہ ان کا متحد ہو جانا ہی اصل فکری تقاضا ہے ۔شہید کشمیری پاکستانی پرچم میں لپٹے دفنائے جاتے ہیں اور کھلم کھلا وادی کشمیر میں جلسے جلوسوں اور گھروں پر یہ پرچم لہرارہے ہیں اس جدو جہد کی جلد کامیابی کے لیے ضروری ہے کہ پاکستانی قوم فرقوں مسلکوں سیاسی و مذہبی گروہوں میں اتحادو اتفاق پیدا کرے اور حکمران ملک کے چالیس سال تک کی عمر کے تمام افراد اور جوانوں کو فوری لازمی فوجی تربیت دیں تاکہ بھارت کے مذموم حملوں پر نوجوان نسل اس کا بھر پور دفاع کر سکے۔تحریک آزاد�ئ جموں و کشمیر کے تحت قومی مجلس مشاورت کا انعقاد ہو چکا ہے جس کے تحت 26جنوری سے 3فروری تک عشر�ۂ کشمیر منایا جارہا ہے۔27تا 31جنوری کے دوران تمام بڑے شہروں میں ضلعی سطحوں پر آل پارٹیز کانفرنسوں کا انعقاد ،یکم اور 2فروری کو ملک بھر کے کسان کشمیر کارواں میں شامل ہو کر بھارتی آبی جارحیت پر احتجاج کرتے ہوئے کشمیریوں کے جہاد سے اتحاد و اتفاق کا اعلان کریں گے جمعۃ المبارک کے روزعلماء و آئمہ مساجد کشمیر میں بھارتی مظالم کو خطبات کے موضوع بنائیں گے اور بعد نماز جمعہ جلوس نکلیں گے چار فروری کو ملک بھر کی طلباء تنظیمیں اور انجمنیں کشمیر ریلیاں منعقد کرکے یکجہتی کا اظہار کریں گی۔پانچ فروری کا یوم منانے کے لیے یہ بھرپور تیاریوں کا حصہ ہیں سید علی گیلانی نے تو کشمیر مسئلہ پر موثر جدو جہد نہ کرنے پر مو لانا فضل الرحمٰن کو ہٹانے کا کہا ہے مگر بہتر یہی ہو گا کہ گزشتہ را صلواۃ و آئندہ را احتیا ط کے مقولہ پر عمل کرتے ہو ئے مو لانا صاحب بھی کشمیریوں کی جدو جہد میں آگے بڑھ کر دل و جان سے اپنا موثرکردارادا کریں ۔وزیر اعظم بھی خارجہ امور کے ماہر کو وزارت خارجہ کاتا ج پہنا دیں تاکہ وہ بیرون ملک دورے کرکے اس معاملہ کی اہمیت سے عالم اسلام کے ممالک و سبھی بیرونی اداروں کو آگاہ کرسکیں ۔عالم اسلام کے تمام راہنماؤں اور قائدین کا پاکستان میں کشمیر کے مسئلہ پر اجتماع منعقد کیا جائے اور یہ سبھی حکمران بھارتیوں پر واضح کردیں کہ اگر اسی طرح کشمیر میں ظلم و بر بریت کا بازار مزید گرم رکھا گیا تو پاکستان عالم اسلام کی مدد سے اس کا موثر جواب دینے پر مجبور ہو گا۔حکمران وسیع البنیاد آل پارٹیز کانفرنس کاانعقاد کریں جس میں اسمبلیوں میں موجو د سیاسی پارٹیوں کو ہی نہیں بلکہ تمام رجسٹرڈ سیاسی جماعتوں کو بھی شمولیت کی دعوت دیں۔علماء وکلاء تاجروں ڈاکٹرز انجینیرز کسان مزدور طلباء تنظیموں کی بھی کانفرنسیں بلوائیں غرضیکہ مسئلہ کشمیر کو قومی ایشو کے طور پر اجاگر کیا جائے اگر سپریم کورٹ بھی پانچ فروری تک پانامہ لیکس والے مقدمہ کو ملتوی کردے تو اس میں کوئی مضائقہ نہ ہو گا کہ پانچ فروری کے یوم یکجہتی تک میڈیا اور لیڈران کے اختلافی بیان رک جائیں اور قومی ایشو پر اتحاد و اتفاق سے پوری دنیا کو قوم کا متفقہ پیغام پہنچ جائے۔

502 total views, 2 views today

Short URL: http://tinyurl.com/h5hdesp
انٹرنیٹ پہ سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضامین
loading...