PTI

پی ٹی آئی کا سفر اور نوجوان کارکن

چوہدری ذوالقرنین ہندل:لکھاری گوجرانوالہ سے تعلق رکھتے ہیں، مکینیکل انجینیئر اور وائس آف سوسائٹی کے سی ای او ہیں۔ پاکستان تحریک انصاف1996میں ایک معروف سابق قومی کرکٹر عمران خان کی کی سربراہی میں سیاسی جماعت کی صورت میں سامنے آئی۔ابتدائی

عمران خان صاحب اب حکومت کو کام کرنے دو

تحریر: میر افسر امان، کراچی عمران خان صاحب سے درخواست ہے کہ اب حکومت کو کام کرنے دے سڑکوں پر احتجاج بہت ہو چکا۔ نواز شریف صاحب کافی عرصہ سے اقتدار میں ہیں ۔پہلے وزیر پھر وزیر اعلیٰ اور اب

نون لیگ بمقابلہ جنون لیگ

تحریر: میر افسر امان، کراچی پاکستان میں نون لیگ بمقابلہ جنون لیگ کا کئی روز سے قوم تماشہ دیکھ رہی تھی۔ پاکستان کے عوام دونوں کے طریقہ کار سے اختلاف رکھتے ہیں۔ ہمارے ملک میں رائج مغربی جمہوریت آدھا تیتر

۔2نومبر -پانامہ لیکس -جمہوریت

تحریر: چوہدری غلام غوث بابا جی مہر دین ہمارے گاؤں کے حجام تھے اور ہما رے آباؤ اجداد کے ساتھ ہندوستان سے ہجرت کرکے آئے تھے باباجی اَن پڑھ ،سادہ مگر دانشور قسم کی آدمی تھے ہمارے گاؤں کے اکثر

نہ میں پہلا ہوں نہ آخری!۔

تحریر:شفقت اللہ ’’نہ میں پہلا ہوں نہ آخری‘‘یہ الفاظ اس دکھی باپ طاہر خان کے ہیں جس کا تین دن کا شیر خوار بچہ شیلنگ سے پیدا زہریلی گیس میں دم گھٹنے سے فوت ہو گیا ۔یہ شخص اتنی گہری

عمران خان سے میٹھے کڑوے بول

تحریر: ڈاکٹر احسان باری پرویز رشید جاچکے باقیوں کی تیاریاں ہیں دفعہ 144کا نفاذ ہو چکا عمران خان نے کرکٹ پر تو راج کیا ہے ویلفیئر کے کاموں میں ایدھی کے بعد شاید اس کا کوئی ثانی نہ ہو مگر

لاک ڈاؤن سے پہلے کریک ڈاؤن

تحریر:رشیداحمد نعیم، پتوکی صحافت سے وا بستگی کے بعد لکھنا کبھی اتنا مشکل تو نہیں تھا جس قدر آج دقت کا سا منا ہو رہا ہے قلم اور کا غذ پکڑے سو چو ں میں گم ہوں مگر خیا لات

شہباز شریف نے عمران خان کی مشکلات بڑھا دیں

تحریر: غلام رضا کہنے والے عمران خان کو کیا کچھ نہیں کہتے مگر تحریک انصاف والوں کا بھی ماننا یہی ہے کہ خان صاحب بغیر سوچے سمجھے کسی پر بھی الزامات لگا کر یوٹرن لے لیتے ہیں،کس سیاسی رہنما کے

دونومبرکچھ نہیں ہو گا یا بہت کچھ ہو گا

تحریر:ایم ایم علی ملک میں دن بدن سردی بڑھتی جا رہی ہے جبکہ سیاسی میدان دن بدن گرم ہوتا جارہا ہے ۔حکمران جماعت مسلم لیگ (ن) اور تحریک انصاف میں الفاظ کی جنگ شدت اختیار کرتی جارہی ہے ایک دوسرے

سیاسی دنگل!گھنا خاردار جنگل

تحریر: ڈاکٹر احسان باری اسلام آباد کو بند کرنے والے اپنی ڈگر پر رواں دواں ہیں اور ہر صورت پانامہ لیکس کی بنیاد پر وزیر اعظم کو ہٹانا چاہتے ہیں۔خواہ اس معرکہ میں کتنی ہی تکالیف برداشت کرنا پڑیں اپنی