یہ میرے نصیب کی بات ہے

Print Friendly, PDF & Email

شاعر : احمد نثارؔ ، ماراشٹر، انڈیا


وہاں آج میں بھی پہنچ گیا، یہ میرے نصیب کی بات ہے
جہاں رحمتوں کا نزول ہے، وہ درِ حبیبؐ کی بات ہے

تجھے لطفِ زیست ملا نہیں، تیرا رنج دور ہوا نہیں
تو درِ نبیؐ کا فقیر بن، یہ بڑے نصیب کی بات ہے

میں اسیرِ رنج و الم تھا کل، میں مریضِ نامِ رسولؐ تھا
میں سکونِ قلب کو پا لیا، یہ میرے طبیبؐ کی بات ہے

میں تڑپتا ہوں مجھے پیاس ہے، تیرے دید کی یہ خیال کر
میری حسرتوں کی تو لاج رکھ، یہ دلِ غریب کی بات ہے

کئی راستے کئی منزلیں، کئی مشورے بھی مِلے تو ہیں
ہے جو بات حق کی نثارؔ سن، وہ میرے حبیبؐ کی بات ہے

 1,068 total views,  2 views today

Short URL: http://tinyurl.com/zbtjedl
QR Code:
انٹرنیٹ پہ سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضامین
loading...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *