٭ مراسلات ٭

ٹیکس ایمنسٹی سکیم : ایک لاحاصل مشق

ٹیکس ایمنسٹی سکیم ایک لا حاصل مشق ہے جس کا وطن عزیز میں دسویں بار تجربہ کیاجا رہا ہے ۔1958ء سے لیکر 2013ء تک کی گزشتہ تمام نو سکیموں سے معیشت کو کوئی خاطر خواہ سہارا نہیں مل سکا۔ 1958ء

پیسہ عوام کا عیاشیاں حکمرانوں کی

مکرمی جناب:آپ کے اس موقر روزنامہ کی وساطت سے وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا جناب پرویز خٹک کی توجہ اس طرف دلانا چاہتا ہوں کہ دولت اللہ تعالیٰ کی بہت بڑی نعمت ہے،کل ایک دوست سے ملنے کی اتفاق ہوئی تو گپ

وزیرِ اعلیٰ سے محکمہ ڈسٹرکٹ جنگلات جھنگ کے کام کی چیکنگ کی اپیل

محترم جناب وزیراعلیٰ پنجاب میاں محمدشہبازشریف صاحب! جناب عالی!گزارش ہے۔محکمہ ڈسٹرکٹ جنگلات جھنگ نے جن جن روڈز پرپودے لگوائے ہیں اور انہوں نے جو اپنے ریکارڈ میں اندرج کیے ہیں وہ تمام موقعے دیکھے جائے اور ان لوگوں نے جو

سنٹرل جیل ڈیرہ غازی خان میں مذہبی انتہا و شدت پسندی عروج پر

مکرمی و محترمی! سنٹرل جیل ڈیرہ غازی خان میں ان دنوں مذہبی انتہا و شدت پسندی عروج پر ہے ۔ مذہبی اور فرقہ وارانہ سوالات میں الجھا کر حوالاتیوں اور نئے حوالاتیوں کو ذلت آمیز ، شدید تشدد کا نشانہ

ایڈیٹوریل ایڈیٹر روز نامہ انصاف کے نا م کھلا خط

مکرمی و محترمی !اسلام علیکم ! زندگی میں بہت سے مزا حیہ پرو گرا م دیکھنے اور سننے کا اتفاق ہو ا ہے سٹو ڈ نٹ لا ئف میں مزا حیہ خا کو ں میں حصہ بھی لیا اور دیکھے

دنیا نے ایسے حکمرانوں کو بھی جنا ہے

مکرمی جناب:۔ ویسے تو حکمرانِ اعلیٰ اوراعلیٰ حاکمیت اللہ تعالیٰ کے ساتھ ہے، مگر اللہ تعالیٰ نے جب اس دنیا میں انسان کو پیدا کرنا چاہا تو اسی انسان کو اپنا خلیفہ اور نائب مقرر کر لیاتاکہ وہ زمین میں

ناکامی پر طلبہ میں خودکُشی کا بڑھتا رجحان

مکرمی! جیسے ہی میٹرک اور انٹرمیڈیٹ کے نتائج کا اعلان ہوتاہے ساتھ میں ناکام ہونے والے کئی نوجوان طلبا و طالبات کی خودکُشی کی خبریں بھی اخبارات میں چھپنا شروع ہوجاتی ہیں۔ خودکُشی کا یہ رجحان انتہائی افسوس ناک ہے۔

جامعہ علوم القرآن پشاور

مکرمی جناب ایڈیٹر صاحب السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔۔۔۔ میں حیات آباد رنگ روڈ پر واقع ایک دینی ادارے کا طالب علم ہوں،یہ ایک دینی ادارہ ہے جو جامعہ علوم القرآن پشاور کے نام سے موسوم ہے،یہاں پہ ہم دینی

ایک سکول میٹرو بس بھی!۔

حکومت نے سرکاری سکولز میں مفت تعلیم کا بندوبست کررکھاہے۔ کتب بھی مفت مہیا کی جارہی ہیں۔ لیکن لڑکیوں کے لیے مفت تعلیم بھی مہنگی پڑرہی ہے۔ کیونکہ قرب و جوار کے سکولز میں تو لڑکیاں آسانی سے پیدل جاسکتی

چلتی پھرتی وال چاگنگ

مکرمی! حکومتی نے دہشت گردی وفرقہ واریت سے نمٹنے اور دیواروں کے حُسن کو لاحق خطرات سے محفوظ رکھنے کے لیے ملک بھر میں وال چاکنگ پر پابندی عائد کررکھی ہے۔ اس پر کافی حد تک عمل بھی کرایا جارہاہے۔