دلخراش واقعات اور ہماری حسی۔۔۔۔ تحریر: نذر حسین چودھری

Print Friendly, PDF & Email

چلو بیٹی تجھے عید کے کپڑوں لا دوں تو معصوم بیٹی نے حیران کن نظروں سے باپ کو دیکھا ۔وہ پچھلے کئی روز سے باپ سے نئے کپڑوں کی ضد کر رہی تھی ۔گزشتہ رات بھی اُس نے جب اپنی توتلی زبان سے باپ کے سامنے نئے کپڑوں کی فرمائش سامنے رکھی تو باپ نے کمرے کے ایک کونے میں پڑی فالج زدہ اپنے بوڑھی ماں کی جانب کچھ ایسی نظروں سے دیکھا کہ اُس بوڑھی کی آنکھوں سے بھی آنسوؤں کی جھڑی لگ گئی ۔دوسرے روزبیٹی ہنسی خوشی باپ کے ساتھ نئے کپڑوں کی خریداری کیلئے تیار ہوئی ۔باپ مسلسل اپنی بیٹی سے نظریں چرا رہا تھا ۔بیٹی کو اُٹھایا اور باہر کی جانب چل پڑا ۔کچھ دور جانے کے بعد اُس نے راستہ بدل دیا اور نہر کی جانب اپنا رخ موڑ لیا ۔نہر کے پاس پہنچتے ہی بیٹی کو ایک جھٹکے سے نہر میں پھینکا اور وہاں سے بھاگا ۔موقع پر شور و غل برپا ہوا ۔لوگوں نے تعاقب کر کے اُس کو پکڑا لیا ۔کچھ لوگوں نے نہر میں چھلانگ لگائی اور بچی کو باہر نکالا تاہم اس وقت تک معصوم پری کوسوں دور جا چکی تھی ۔یہ کہانی نہیں سچا واقعہ ہے جو راجن پور میں پیش آیا ۔بچی کا باپ کئی روز سے بے روزگار تھا ۔اُوپر سے بوڑھی ماں کی بیماری اور پھر بال بچوں کی فرمائشیں سو اُس نے وہ کام کر دیا جس سے انسانیت کی بے حسی پوری طرح عیاں ہو کر رقص کرتی نظر آتی ہے ۔جیسے جیسے عید نزدیک آرہی ہے ایسے دل سوزاور دل خراش واقعات بھی بڑھتے چلے جا رہے ہیں ۔فیصل آباد میں بیوی نے ہر سال کی طرح عید کی شاپنگ نہ کرانے پر بیچ سڑک پر بچے اور شوہر کو چھوڑ کر قریبی نہر میں چھلانگ لگا دی ۔حال ہی میں ٹمن کے گاؤں کھوئیاں میں چالیس سالہ شخص نے قرض کا بوجھ ساتھ لئے گلے میں پھندا ڈال کر خود کشی کر لی ۔دوسری جانب اِنہیں خبروں کے ساتھ وزیر اعظم ہاؤس کے باتھ روموں کی تزئین و آرائش کیلئے 22کروڑ کے فنڈز منظوری کی خبر پڑھ کر اِن نا ہنجار حکمرانوں کے انجام کا سوچتے ہی جیسے رونگٹے کھڑے ہو گئے ۔ صرف یہی نہیں بلکہ اِن کا انداز حکمرانی ،اِن کے پروٹوکول دیکھیں۔کیا اِن کو احساس نہیں ہے کہ وہ اپنی ہلاکت کا ساماں سے سڑکوں پر دندناتے پھر رہے ہیں ۔چند روز قبل ہی تلہ گنگ شہر میں بڑی بڑی گاڑیوں کی اُڑتی دھول میں سڑک کنارے اپنا رزق چھاننے والوں میں وہ آزار بند اور بنیان بیچنے والا اٹھارہ سالہ لڑکا ہاتھ جوڑ جوڑ کر سامان ضبط کرنے والوں کے پیچھے پیچھے بھاگ رہا تھا ۔شام کو وہ اپنے گھر کیا لے کر گیا ہوگا ۔اگر خدانخواستہ اُس نے اپنے ساتھ کچھ کر لیا تو کون ذمہ دار ہو گا ۔حکومتوں کا کام تو لوگوں کو اُن کی دہلیز پر سہولیات فراہم کرنا ہوتا ہے ۔یہاں کیا ہو گیا جو لوگوں سے اُن کے چند سوروپے کمانے والے روز گارکو بھی چھینا جا رہا ہے ۔ٹی ایم اے میں بڑی تعداد میں ضبط کی گئی ریڑھیاں پڑی ہیں ۔اُن کے غریب مالکان کدھر گئے ۔ان کے ساتھ کیا بیت رہی ہے کیا کسی کو کوئی پتہ ہے؟ ۔ان میں سے کسی نے راجن پور والے باپ کا روپ دھار لیا تو ذمہ دار کس منہ سے روز قیامت اپنے شفیق اور رحمت العالمین نبیﷺ کا سامنا کرینگے ۔جو عید کی نماز ادا فرمانے گھر سے باہر تشریف لے گئے تو ایک اکیلے بچے کو دوسروں سے الگ تھلگ پاکر اُس کے پاس گئے اور پوچھنے پر پتہ چلا کہ وہ یتیم تھا ۔سر پر اپنا دست شفقت رکھا اور گھر لے گئے ۔خلیفہ دوئم کے دور کو ہی دیکھ لیں ۔ امیر المومنین عمرؓ کوتمہارے حالات کا کیا پتہ ۔حضرت عمر فاروقؓ نے جب ایک بڑھیا کو اُس کے بھوک سے بلکتے بچوں کے سامنے اپنی صفائی دینی چاہی تو بڑھیا نے امیر المومنین حضرت عمر فاروقؓ کویہ کہہ کر لاجواب کردیا کہ جب اُن کو ہمارے حالات کا نہیں پتہ تو کیوں وہ ہمارے خلیفہ بنے ۔فوراً دوڑے بیت المال پہنچے کھانے پینے کی ضروری اشیاء خادم سے کہہ کر اپنے کمر پر لادی اور بڑھیا کے پاس واپس پہنچے اور جب تک اُن کے چہروں پر مسکراہٹ نہ دیکھ لی ۔چین نہ آیا۔میری حکمرانوں نہیں بلکہ سرکاری افسران سے درخواست ہے کہ خدارا حکمران تو ہیں ہی ظالم کم از کم آپ ہی ان چھوٹے چھوٹے برسرروزگار غریبوں کے ساتھ اپنا رویہ مہربانوں جیسا رکھیں اگر اُن سے کوئی غلطی ہو رہی ہے تو پیار سے سمجھائیں ۔تنبیہ کریں ۔وارننگ دیں ۔ایسا ظلم نہ کریں کہ اُن کا سامان ہی ضبط کر لیں ۔اللہ پاک سب کو ہدایت اور سیدھا راستہ پر چلنے کی توفیق عطا ء فرمائیں۔ آمین

426 total views, 2 views today

Short URL: //tinyurl.com/j5oe79l
QR Code:
انٹرنیٹ پہ سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضامین
loading...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *