٭ تبصرہ کتب ٭

اکرم قریشی!شخصیت و فن! ایک مستند ادبی دستاویز

تبصرہ کار :منشاء فریدی ’’اپنے سرخروجانشین جناب منشاء فریدی کے ذوق مطالعہ کے لیے ۔۔۔! جی ہاں ۔۔۔ یہ وہ جملہ ہے جو ایک تحقیقی و تاریخی اہمیت کی حامل کتاب پر میرے استاد محترم فرید ساجد نے اس وقت

عکاس انٹرنیشنل 25 عباس خان نمبر

تبصرہ کار: اختر سردارچودھری، کسووال عکاس انٹرنیشنل ادبی کتابی سلسلے کا پچیس واں ایڈیشن عباس خان نمبر اس وقت میرے ہاتھوں میں ہے جو کہ ایک عمدہ کا وش ہے۔عکاس انٹرنیشنل کسی علمی وادبی دستاویز سے کم نہیں ہے۔ 232صفحات

۔”قفس میں رقص“میں رقاص کہانیاں

تبصرہ کار:حسیب اعجاز عاشرؔ شناسائی سے بات کا آغاز ہو تو میری یاداشت اتنی اچھی تو نہیں مگر جو دل میں گھر کرلیتے ہیں تو اُنکی ہر ادا ہر بات کسی نہ کسی بہانے یاد رہ ہی جاتی ہے۔یہ10جون 2014کی

واقعات لاہور

تبصرہ کار: اختر سردار چودھری ، کسووال ادب و صحافت ،سیاحت و ثقافت ،ماضی اور حال کی تاریخ بتاتی ہے کہ جس قدر لاہور کے حوالے سے کتابیں ،مضامین ،یاد داشتیں لکھی گئی ہیں ۔کسی اور شہر کے بارے میں

عہد راحیل شریف، پاک فوج کے کارہائے نمایاں

تبصرہ کار: اختر سردار چودھری ،کسووال پاک فوج کی جرات ودلیری،عزم وحوصلے، ایمان ویقین ، ایثار وقربانی کی نظیر تاریخ میں نہیں ملتی ،وطن عزیز کی سرحدوں کا دفاع ہو یا قدرتی آفات ، امن و امان کا مسلہ ہو

۔’’صدائے علم‘‘۔۔خزانہِ علم

ازقلم: حسیب اعجاز عاشرؔ میرے محسن دوست اخترسردار چوہدری کی جانب سے خوبصورت تحفہ سمیع اللہ خان کی مرتب کردہ کتاب’’صدائے علم‘‘میرے سامنے ہے۔مطالعہ کے بعد سوچ و قلم اِس کشمکش میں ہیں کہ اپنے تاثرات کو کیا عنوان دوں؟

نوک نوک۔۔کامیابی ہے منتظر

تبصرہ کار : حسیب اعجاز عاشرؔ ’’آؤ کسی مقصد کے لئے جیتے ہیں،آؤ کسی مقصد کے لئے مرتے ہیں۔۔۔میری سوچ کا محور اسلام امت اور پاکستان۔۔۔سب کچھ نہ سہی کچھ نا کچھ ضرور کرنا ہے۔۔۔ہاں میرا دل بار بار مجھ

نصرت عزیزاور”اک ذرا سی بات”۔

تبصرہ کار: شاہداقبال شامی میں نے اپنی زندگی میں ایسے بہت سے لکھنے والے دیکھے ہیں وہ جو لکھتے ہیں کرتے اس کے برعکس ہیں،ان کے قول فعل میں تضاد واضح جھلکتا ہے ،لکھتے وہ رشوت کے خلاف ہیں لیکن

میری آنکھوں میں کتنا پانی ہے

تبصرہ کار: اختر سردار چودھری ،کسووال دوسال قبل سوشل میڈیا پر جبارواصف سے اِن کے دکھ درد بھرے،غموں سے لپٹے اشعار پڑھ کر دوستی ہوئی ،اسی دوران میں نے اجازت لے کر ان کی بہت ساری شاعری کو اپنے کالموں

صحافت کی مختصر تاریخ (قوانین و ضابطہ اخلاق)۔

صحافت کا خاص طور پر اردو صحافت کا علمی ، ادبی ،تعلیمی، ثقافتی اور تہذیبی پہلو بھی ہے۔ہم عام طور پرعلمی پہلو کو دیکھیں تو اخبار ہی واضح دیکھا جاسکتا ہے۔جس میں علم کے حوالے سے بہت ساری معلومات میسر