Posts By: Hidayat Ullah Akhtar

دودھ نہیں ملنے والا

مجھے پینے کا شوق نہیں۔پیتا ہوں غم بھلانے کو۔اب یہ پینے سے انسان غم کیسے بھول جاتا ہے یہ تو اس شعر کا خالق ہی بتا سکتا ہے۔ یہ بھی معلوم نہیں کہ شاعر نے یہ شعر کس کیفیت میں

انصاف کب ملے گا

میں لفظوں کی ہیرا پھیری اور لفاظی کرنے کے فن سے نا اشنا ہوں ۔ثقیل الفاظ کا استعمال اس لئے اچھا نہیں سمجھتا کہ اس کو سمجھنے کے لئے لغت کی تلاش رہتی ہے اس لئے اپنا مدعا سیدھے سیدھے

جی بی ٹیکس معطل

جی بی میں ٹیکس معطل ہونے کے بعد ایک شخص مٹھائی کا ڈبہ ہاتھ میں لئے گدھے کے قریب کھڑا گدھے سے یوں گویا ہوا۔ ابے گدھے کھا مٹھائی۔ کیوں مجھے گدھا سمجھتے ہو جو مٹھائی کھائوں ۔ کیا مجھے

سٹی پارک گلگت میں یوم حسین

آج جب سٹی پارک سے گزر ہوا تو اپنے دوست منظور کشمیری ارے بابا یہ کشمیر کے نہیں ہیں بلکہ گلگتی کشمیری ہیں اور بلدیہ گلگت میں اپنی ذمہ داریاں نبھا رہے ہیں ۔پر نظر پڑی جو بڑے ہی جوش

سوچ مرگئی

کیا سوچ رہے ہو عنوان کے بارے اچھا اس کا مطلب یہ ہوا کہ آپ کی سوچ زندہ ہے اور مجھے کوس رہے ہو کہ یہ کیا عنوان رکھ دیا۔ٹی وی دیکھتے ہیں آپ جی جی بلکل کیا دکھائی دیتا

حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہُ کی تنخواہ

اور جب میں حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہُ کے بارے پڑھ رہا تھا تو میں معاشرے کا نہیں اپنا جائزہ لے رہا تھا۔ میں اپنے گھر کو اور روزمرہ زندگی کے معمولات کے بارے غور کر رہا تھا۔کتنا جھوٹ

کہانی عقل کی

کہانی ہے تو پرانی پر ہے صدا بہار۔خاص کر آج کل کے لئے تو اس کو آپ انگریزی والا ستائش کا جملہ اے ون کہہ سکتے ہیں ۔لیکن ایک بات کا وسوسہ ہے کہ پتہ نہیں کہ آپ اس کو

خود پسندی اور خود نمائی

انگریزی میں ایک جملہ ہے لُک بیزی ڈُو نتھنگ۔اگر اس کے لفظی ترجمے سے ہٹ کر کوئی بات ہم کر سکتے ہیں تو وہ یہ ہے کہ جو کچھ نہیں کرتے وہ کمال کرتے ہیں ۔اس کمال میں موبائل کیمروں

ہم ابھی لشکر یزید میں ہیں

یہ کیا نماز ہے سجدے میں سر جھکا لینا نماز کہتے ہیں سجدے میں سر کٹانے کو میں اپنے کو کوئی بڑا لکھاری تصور نہیں کرتا اور نہ ہی مجھے اس بات کا دعویٰ ہے کہ میں سب کچھ جانتا

پن لیس

قلم بھی اب ہاتھ سے نکلتا ہوا دکھائی دے رہا ہے آج سےپانچ سال پہلے ایک مضمون پڑھا تھا جس کو پڑھنے کے بعد میں اپنے آپ سے سوال کرنے لگا تھا کہ کیا ایسا ایک زمانہ آئے گا جس