٭ پروفیسر محمد عبداللہ بھٹی ٭

راکھ میں چنگاری

تحریر:پروفیسر محمد عبداللہ بھٹیاُ س کے منہ سے نکلا ہوا جملہ کریکر کی طرح پھٹا اور میرے خوابیدہ اعصاب کو بیدار کر تا چلا گیا ‘ میری رات کی سستی مکمل بیداری میں ڈھل گئی میں نے بے چینی سے

خوف خدا

تحریر:پروفیسر محمد عبداللہ بھٹیمیرے سامنے بیٹھے شریف معصوم پاکباز میاں بیوی ہا رے ہو ئے کھلاڑیوں کی طرح بیٹھے تھے جیسے وہ اپنی متاع حیات لٹا چکے ہوں اُن کی زندگی بھر کی کما ئی اُن سے چھین لی گئی

کوچہ ء ہجویر

تحریر:پروفیسر محمد عبداللہ بھٹیمیں ایمان افروز مستی اور سرور سے بھری نشاط انگیز گھڑیوں سے گزر رہا تھا میرے جسم کا انگ انگ اور روح ایما نی حرارت سے پگھل رہے تھے میرے با طن اور روح کے عمیق ترین

چہرے پہ چہرہ

تحریر:پروفیسر محمد عبداللہ بھٹیخو ش قسمت ہو تے ہیں وہ لو گ جن کو خالقِ کائنات نے ہدایت کا نور بخشا اور وہ اُس نور کے ساتھ ہی قبر میں اُترے جبکہ بد قسمت ہو تے ہیں وہ لوگ جنہیں

دو چہرے

تحریر:پروفیسر محمد عبداللہ بھٹیمیں حسبِ معمول آفس سے گھر آرہا تھا ‘ لاہور کی سڑکوں پر ہمیشہ کی طرح ٹریفک کا سیلاب رواں دواں تھا ‘ اناڑی ڈرائیوروں ‘ ڈپریشن ناکامیوں کے مارے شہریوں نے سڑک کو ہی میدانِ جنگ

روحانی تلاش

تحریر:پروفیسر محمد عبداللہ بھٹیانسان ساری عمر اپنی محدود سوچ کے دائروں میں حرکت کر تا رہتا ہے ‘ انسان دنیاوی خوا ہشات کے لیے اپنی مرضی کے خوابوں کی تعبیر دیکھتا رہتا ہے یہی کو شش گو تم بدھ کا

روحانی مسافر گو تم بدھ

تحریر:پروفیسر محمد عبداللہ بھٹیبلا شبہ خالقِ کائنات کی ہر تخلیق اپنا خاص حسن رکھتی ہے ‘ آپ کائنات کے چپے چپے پر بکھرے خالقِ کائنات کی تخلیقات کے جلوے دیکھ کر اُس کی خالقیت کی داد دئیے بنا نہیں رہ

آج کی روحانیت

تحریر:پروفیسر محمد عبداللہ بھٹیشہر کے خوبصورت ترین مہنگے شادی ہال میں دعوت ولیمہ کا فنکشن جاری تھا ‘ موصوف کے معا شرے کے بااثر فرد کا چشم و چراغ ہو نے کی وجہ سے زندگی کے ہر طبقے کے لوگ

تقویٰ کا حصول

تحریر:پروفیسر محمد عبداللہ بھٹی حضرت ابراہیم خالق ارض و سما کے جلیل القدر پیغمبر تھے آپ کا مقام و مرتبہ جتنا بڑا تھا آپ پر اللہ تعالی کی آزمائشیں بھی بہت کڑی تھیں محبوب خدا سرتاج الانبیا کا فرمان ہے

نظر کعبہ پر

پروفیسر عبداللہ بھٹی صاحب فریضہ حج کی ادائیگی کیلئے مکہ مکرمہ ہیں وہاں سے انکی دوران حج خصوصی تحریر سعودی ائیر لائن کا دیو ہیکل بو ئنگ طیا رہ جدہ کی فضاؤں میں داخل ہو چکا تھا ‘ائر ہو سٹس