٭ ملک ارشد جعفری ٭

کرپشن کے خاتمے کیلئے قومی ادارے کیوں مفلوج؟

تحریر: ملک ارشد جعفری پاکستان کا ہر ادارہ اپنی ذمہ داری دوسروں پر ڈالنے کی رو ش پر چل نکلا ہے احساس ذمہ داری لینے کے لیے کوئی تیار نہیں کرپشن کے خلاف خوشنما بیانات تو ہر دوسرا سیاستدان دے

میرے وطن تجھے مسیحا کی ضرورت ہے

تحریر : ملک ارشد جعفری میں ملک کے مختلف حصوں میں اپنی تحریر کو سچائی کے سانچے میں ڈھالنے کے لیے پھرتا ہوں اور عوامی رائے لیکر اپنی تحریر کو کاغذ کی زینت بتاتا ہوں کئی سالوں سے لیکن کئی

آج غدار وطن کو نشان عبرت بنانے کا وقت ہے ۔۔۔۔ تحریر: ملک ارشد جعفری

میرے ملک کے حکمرانوں سقوط ڈھاکہ پر برسوں آنسو بہانے کے باوجود ہم نے ماضی کی سنگین غلطیوں سے آج تک سبق نہیں سیکھا ۔پاکستان کے وجود کے ساتھ ہی ایسی ملک دشمن قوتوں کا بھی ظہور ہوا جو شروع

مریض کی پریشانی اور مارشل لاء کو صدا۔۔۔۔ تحریر:ملک ارشد جعفری

چند روز سے وزیر اعظم پاکستان کی بیماری کے بعد پاکستان کے مختلف حلقوں میں کئی آوازیں آنے لگیں کبھی اک فارمولا اور کبھی دُوسرا ، عوام ہمیشہ کی طرحبے چین کیونکہ غریب کو ان چیزوں سے کوئی لینا دینا

ایسا نہ ہو پھر پچھتاؤ ۔۔۔۔ تحریر:ملک ارشد جعفری

ملکی حالات سیاستدانوں نے ایسے کر دئیے کہ صرف اندرونی نہیں بیرونی خطرات بھی سر پر چڑھ کر بول رہے ہیں ۔ پاکستان اپنے ہمسایہ ملکوں سے اچھے تعلقات بنانے میں نا کام ہوچکا ہے۔ کوئی خارجہ پالیسی نہیں، کبھی

چورنہیں تو شور کیسا ۔۔۔۔ تحریر :ملک ارشد جعفری

کئی دنوں سے پانامہ لیکس کی ہر روز نئی بحث سن سن کر لوگ تنگ آگئے کہ حکمران چو رہیں یااپوزیشن میں خرابی ہے کیونکہ وزیر اعظم کے خاندان نے تو خودآف شور کمپنیوں کو تسلیم کرلیا کہ یہ ہماری

کرپشن کا خاتمہ اور بلا تفریق احتساب ناگزیر ۔۔۔۔ تحریر :ملک ارشد جعفری

آج ہر انسان جو وطن سے محبت کرتا ہے اپنی زبان سے یہ گن گا رہا ہے کہ آرمی چیف نے جو تھوڑے عرصہ میں دہشت گردی ، انتہا پسندہی اور فرقہ پرستی کے خلاف جو جنگ لڑی اس کی

پانامہ لیکس پر جوڈیشل کمیشن کا اعلان ۔۔۔۔ تحریر :ملک ارشد جعفری

دویوم قبل وزیر اعظم نواز شریف نے اپنی تقریر میں اعلان کیا کہ میں نے ایک ریٹائرڈ جج سپریم کورٹ کی سربراہی میں جوڈیشل کمیشن کا اعلان کر دیاجو الزامات میرے خاندان کے افراد کے خلاف ہیں پروپیگنڈا کرنے والے

کب ہوگا قانون اک جیسا ؟۔۔۔۔ تحریر:ملک ارشد جعفری

کئی دنوں سے یہ بات زباں زد عام ہے کہ سچ لکھنا اور بولنا اسلامی مملکت پاکستان میں جرم ہے فائدہ کم اور نقصان زیادہ ہے کیونکہ میرا ذاتی تجربہ ہے جب بھی سچ تحریر کیا یا میدا ن میں

پنجابی فلم “ووہٹی دا نو کر”کا عملی نفاذ۔۔۔۔ تحریر:ملک ارشد جعفری

پنجاب میں حقوق نسواں بل مشہور پنجابی فلم “ووہٹی دا نوکر”کا عملی نفاذ ہے جو کہ بقول مولانا فضل الرحمن گھر سے خادم اعلیٰ پنجاب کا ایسا کارنامہ ہے جسے ہمیشہ یاد رکھا جائے گا مسلم معاشرے میں ایک محفوظ