Monthly Archives: February 2017

دارالفساد میں آپریشن ردالفساد۔۔۔۔دوسرا حصہ

نوٹ:۔ پاکستان جو کبھی امن کا گہوارا تھا، آج لوگ اسے دارالفساد کہہ رہے ہیں، جبکہ پاک فوج نے ایک نیا آپریشن شروع کیا ہے جسکو ’’آپریشن ردالفساد‘‘ کا نام دیا گیا ہے۔  دارالفساد اور’’آپریشن ردالفساد‘‘ کو سامنے رکھ کر

جوزیئے گھی

کچھ روایات یا رواج ایسے ہوتے ہیں جو وقت کے ساتھ اپنی  افادیت کھو دیتے ہیں یا  حالات اور واقعات ان روایات اور رواج کو ترک کرنے پر مجبور کر دیتے ہیں ۔گلگت بلتستان میں ہمیشہ سے شین قوم کا

سی پیک کے ثمرات سب کے لئے

چوہدری ذوالقرنین ہندل۔گوجرانوالہ۔چیف ایگزیکٹیو وائس آف سوسائٹی سی پیک اکنامک کوریڈور کا معاہدہ پاکستان اور چائنہ کے اشتراک سے 2015میں طے ہوا۔جس میں اقتصادی راہداری کے روٹ اور گوادر سمیت بہت سے منصوبے شامل ہیں۔اس منصوبے پر کام جاری و

دارالفساد میں آپریشن ردالفساد۔۔۔۔پہلا حصہ 

نوٹ:۔ پاکستان جو کبھی امن کا گہوارا تھا، آج لوگ اسے دارالفساد کہہ رہے ہیں، جبکہ پاک فوج نے ایک نیا آپریشن شروع کیا ہے جسکو ’’آپریشن ردالفساد‘‘ کا نام دیا گیا ہے۔  دارالفساد اور’’آپریشن ردالفساد‘‘ کو سامنے رکھ کر

خصوصی افراد اور ہماری زمہ داری

کراچی ووکیشنل ٹریننگ سینٹر نے حکومت سندھ کے تعاون سے  کراچی ایکسپو سینٹر میں ایک  ایکسپو  کا انعقاد کیا  جو اپنی نوعیت کی ایک بہترین ایکسپو تھی ایکسپو سینٹر کے تین ہالوں پر محیط یہ ایکسپو خصوصی افرادکو ایک پلیٹ

ہنی سارا

گلگت کی تاریخ میں دو قدیم نام امسار اور ہنی سارا ملتے ہیں ۔کہا یہ جاتا ہے کہ موجودہ نوپورہ کا قدیم نام امسار تھا اور نوپورہ حکمرانوں کے لئے مخصوص تھا اور یہاں رہنے والے حکمرانوں کو اسی نسبت

لاہور، قذافی اسٹیڈیم، اورپی ایس ایل کا فائنل

نوٹ:دوستوں یہ مضمون عام مضمونوں سے زرا ہٹ کرہے، اس میں لاہور کی محبت کا اظہار ایک بڑئے ادیب کی لاہور سے محبت کے ذکر سے کیا ہے۔ لاہور کا قذافی اسٹیڈیم   ہمارا قومی اثاثہ ہے، اس کا پورا ذکر

قصوروارکون؟

یہ آج سے دو دن پہلے کی بات ہے رات کا سناٹا ہر طرف چھایا ہواتھا عمو ماً اس وقت لائٹ جاتی نہیں تھی مگر آج چلی گئی تھی سردیوں کی آمد آمد تھی اس لیے خا موشی کا احساس

کراچی یونیورسٹی اور ٹرانسپورٹ کا ناقص نظام

گذشتہ  دنوں کسی ضروری کام سے کئی دفعہ کراچی یونیورسٹی جانے کا اتفاق ہوا   وہاں  بہت سی تکلیف دہ  باتیں میرے  مشاہدے میں  آئیں  جس میں سب سے اہم  کراچی یونیورسٹی کے طلبہ کو حاصل سفری سہولیات   تھیں ،تیزی سے

جنرل ضیاءالحق کے ہمجولی

سابق آمرجنرل ضیاءالحق  (جس کو کچھ لوگ جنرل ضیاع بھی لکھتے ہیں)نے اپنے گیارہ سالہ اقتدار کے دور  میں منافقت کے تمام ریکارڈ توڑ ڈالے تھے۔اقتدار پر ناجائز قابض ہونے سے پہلے تک سگریٹ پیتا تھا لیکن اپنے دورمیں سگریٹ