کینسر جسے پھیلتے موزی مر ض کی وجہ سے شرح اموات میں خطر ناک حد تاک اضافہ ہو چکا ہے

Print Friendly, PDF & Email

پاکپتن (بیورورپورٹ) کینسر جسے پھیلتے موزی مر ض کی وجہ سے شرح اموات میں خطر ناک حد تاک اضافہ ہو چکا ہے ، کینسر کے ابتدائی علامات ظاہر ہونے پر اگر موثر طریقے سے علاج معالجہ کیا جائے تو اس لاحق ہونے والی مر ض کا تدارک ممکن ہے ، کینسر قابل علاج مرض ہے ، کینسر سے بچاؤ کیلئے احتیاطی تدابیرا ختیار کی جائیں ، سادہ اور متوازن خوارک کا استعمال اور فوری تشخیص کے زریعے کینسر جیسے موزی مرض پر قابو پایا جا سکتا ہے صحت کی معیاری سہولیات کی فراہمی حکومت کی اولین ترجیحات میں شامل ہے ، مریضوں کو علاج معالجہ کی معیاری سہولیات کی فراہمی کیلئے حکومت خطیر فنڈز خرچ کر رہی ہے، ان خیالات کا اظہارڈپٹی کمشنر احمدکمال مان نے کینسر کے عالمی دن کے سلسلہ میں ڈی ایچ ڈی سی میں منعقدہ سیمینار کے شرکاء سے کطاب کرتے ہوئے کیا ، سیمینار میں چیف ایگز یکٹو آفسیر ڈسٹرکٹ ہیلتھ اتھارٹی ڈاکٹر رانا امتیاز احمد ، ڈی آئی او سید سلمان حسین ، ڈاکٹر نیاز احمد ، صدر ڈسٹرکٹ بار ایسو سی ایشن راؤ محمد اکرم ، سول سو سائٹی کے ممبران ، معاشرہ کے صاحب الرائے لوگ سمیت دیگر ہیلتھ ڈیپارٹمنٹ کے افسران و عملہ نے شرکت کی ، اس موقع پر چیف ایگز یکٹو آفسیر ڈسٹرکٹ ہیلتھ اتھارٹی ڈاکٹر رانا امتیاز احمد نے کہا کہ عالمی ادارہ صحت کے مطابق دنیا بھر میں ہونے والی اموات کی دوسری بڑی وجہ کینسر ہے ، سال2018 میں96 لاکھ افراد کینسر کے باعث زندگی کی نعمت سے محروم ہو گئے جبکہ پاکستا ن میں سالانہ تقریبا1.5 لاکھ افراد کینسر کا شکار ہوتے ہیں روز انہ کی بنیاد پر معمولات زندگی کے امور انجام دینے میں محتا ط رویہ اپنائیں ، کینسر سے بچاء کیلئے متوازن غذا کا ستمال کریں ، واک اور ورزش کو معمول بنائیں ، تمباکو نوشی سے پرہیز کریں ، موٹاپے سے بچاؤ کریں اور اس سلسلہ میں وزن نہ بڑھنے دیں اور تابکار شعاعوں اور ماحولیاتی آلودگی سے بچیں ، علاوہ ازیں ڈپٹی کمشنر احمد کمال مان نے محکمہ ہیلتھ کے حکام کو اس سلسلہ میں موثر طریقے سے آگاہی مہم چلانے کیلئے ہدایات جاری کیں تا کہ اس موزی مرض کے بارے میں عوام کو آگاہی دے کر اس مرض سے بچاؤ کیا جا سکے اور فرد اس موزی سے بچاء کیلئے سو سائٹی میں اپنا موثر کردار ادا کر سکے، علاوہ ازیں ڈپٹی کمشنر احمد کمال مان کی زیر قیادت کینسر سے بچاؤ و آگاہی کے سلسلہ میں واک بھی نکالی گئی۔

108 total views, 3 views today

Short URL: //tinyurl.com/y7bkmarw
QR Code:
انٹرنیٹ پہ سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضامین
loading...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *