لیڈز: ۲۲ اکتوبرکشمیریوں کی تاریخ کا ایک سیاہ باب ہے: سردار شوکت علی کشمیری

Print Friendly, PDF & Email
لیڈز(پ ر )یونائیٹڈکشمیر پیپلز نیشنل پارٹی(یو۔کے ۔پی۔این۔پی) کے چئیرمین سردار شوکت علی کشمیری نے لیڈز کے مقام پر ایک سیمنار جس کا انعقاد یو۔کے ۔پی۔این۔پی لیڈز برانچ نے کیا تھا سے خطاب کر تے ہوئے کہا کہ ۲۲ اکتوبر کشمیریوں کی تاریخ میں ایک سیاہ باب کی حیثیت رکھتا ہے۔قبائلی حملے نے کشمیریوں کو آزادی و خودمختاری سے محروم کر کے غلامی کی تاریکی میں پہنچایااور ریاست جموں وکشمیرکی تقسیم کی راہ ہموار کی۔ مسئلہ کشمیرپاکستان کی جنگ باز قوتوں کا پیدا کردہ ہے۔پاکستان نے ۲۲ اکتوبر ۱۹۴۷ کو معاہدہ قائمہ کی خلاف ورزی کر کہ جنرل اکبر اور میجر خورشیدانور کی قیادت میں قبائلیوں نے ریاست پر حملہ کیا۔جس کی تاریخ گواہ ہے اور جس کاتذکرہ پاکستان کے حکمران اور فوج کے سابق افسران اپنی کتابوں میں بھی اور سرعام میڈیا میں اعتراف کر چکے ہیں۔اُن کشمیری قوتوں کو کبھی معاف نہیں کریں گے جنہوں نے کل بھی ہماری ماؤں ،بہنوں کی عزتوں کو تا ر تار کر کہ فتح کا جشن منایا او ر آج بھی اپنی اَنا کی تسکین کے لیے آئے روز کراس بارڈر فائرنگ ،ریاست کے نوجوانوں کا اغوا اور قتل و غارت کا بازار گرم کر رکھا ہے۔سردار شوکت علی کشمیری نے مزید کہا کہ ہماری پارٹی جنگ باز قوتوں کے خلاف ماضی کی طرح بھر پور مزاحمت کرتی ہے ۔ اور مطالبہ کرتی ہے کہ آگ اور خون کا کھیل کشمیراور اس کی سرحدوں پر فوراً بندکیا جائے۔
سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے جموں وکشمیر نیشنل انڈیپنڈنس الائنس کے چئیرمین محمود کشمیری، فرزندء کشمیر مقبول بٹ کے صاحبزادے شوکت مقبول بٹ، ک۔ این ۔ پی کے صدر عباس بٹ، ڈاکٹر شبیر چوھدری،پروفیسرنذیرتبسم،پرویز فتح۔یو۔کے ۔پی۔این۔پی برطانیہ کے صدر راجہ عثمان کیانی،سردار اسد خان،سعیدخان، پارٹی لیڈزبرانچ کے صدر ضیاء احمداورفاروق خان نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کی پاکستان اور بھارت ہمارے حق آزادی کو دبا نہیں سکتے۔ پاکستان کے حکمران طبقات نے کشمیریوں کا جیناحرام کر رکھا ہے اور جو بھی کشمیری اس قبضے کے خلاف آواز بلندکرتا ہے وہ قتل کردیاجاتا ہے۔ مقررین نے مزید کہا کہ کشمیری قوم کو اپنے عقائد کی جنگ لڑنے کے بجائے اپنی آزادی کی جنگ لڑنی چاہئیے۔پاکستان کو اقوام متحدہ کی قرادادوں اور تقسیم برصغیرمیں پرنسلی اسٹیٹسزکے فارمولے انڈین انڈیپنڈنٹ ایکٹ کی روشنی میں اپنے تعین کردہ کردار پر عمل درآمد کرتے ہوئے خطے کے وسیع تر مفادات میں فوری اقدامات کرنے چاہیں۔قوم پرستوں کو چاہیے کہ تمام تعصبات سے با لاترہو کر مادروطن کی آزادی و خودمختاری کے لیے مشترکہ جدوجہدکریں۔ سیمینارمیں برطانیہ بھر سے کارکنوں جن میں سردارآفتاب خان، جمیل لطیف،شوکت حسین،قمر ضیاء،ظفرچغتائی،آصف محمود، نویدخان،اعجازخان،شاھدنور، صبور خان،ایاز محمود،فرحادایاز،عتیق اجمل،سرفراز احمد،ثاقب خان، کامران زراعت،منصور شاہ، ساجدنواز خان،شیخ وحید،وقاس یاسین،عدنان سرور،موسیَ صادق،گل زمان،رازق شفیق،فہیم اشرف،شہزیب مظفر،زیشان اطہر، این۔ایس۔ایف کے راہنما آصف خان، عمران یعقوب کے علاوہ لیڈز میں بسنے والے کشمیریوں نے بڑی تعداد میں شرکت کی۔

 

 1,775 total views,  3 views today

Short URL: http://tinyurl.com/ztpyng5
QR Code:
انٹرنیٹ پہ سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضامین
loading...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *